تم

میری ابتدا بھی تم
میری انتہا بھی تم

جو سوچ کا پہلو بدلو تو
امید کے ڈھلتے سورج کی
موہوم سی آخری کرن بھی تم

میری ابتدا بھی تم
میری انتہا بھی تم

میرے جزبات کے بہتے دھاروں کا
ٹھنڈا نیلا پانی تم
میری موجیں تم، میرا ساحل تم

میری ابتدا بھی تم
میری انتہا بھی تم

میرے پت جھڑ جیسے جیون میں
گلاب سا کھلتا پھول بھی تم
میری بہار کے سارے رنگ بھی تم

میری ابتدا بھی تم
میری انتہا بھی تم

Advertisements

2 thoughts on “تم

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s