محبت پھول جیسی ھے

محبت پھول جیسی ھے۔ ۔ ۔
جو زمیں سے عشق رکھتی ھے
تند و تیز آندھی میں
خود کو وار دیتی ھے
زمیں سے ہاتھ اپنا
مگر تھامے رکھتی ھے

محبت پھول جیسی ھے۔ ۔ ۔
جو خود میں رنگ رکھتی ھے
مہکتے جزبات کی تتلیوں کو
ھمیشہ سنگ رکھتی ھے
خوشی سے جھوم اٹھتی ھے
سرشار ہوا جب چلتی ھے

محبت پھول جیسی ھے۔ ۔ ۔
جو ساتھ کانٹے رکھتی ھے
چھین کے لیجانے والے کو
لہو لہان کرتی ھے
اپنا ھسار کرتی ھے
زمیں سے عشق جو کرتی ھے

محبت پھول جیسی ھے۔ ۔ ۔
ہجر کی خزاوں میں
مرجھا کے بیٹھ جاتی ھے
سوکھ کے بکھر جاتی ھے
زمیں سے لپٹ جاتی ھے
ملن کی بہاروں کا
پھر انتظار کرتی ہے
محبت پھول جیسی ھے۔ ۔ ۔

Advertisements

2 thoughts on “محبت پھول جیسی ھے

  1. ma sha ALLAH.it is again fantastic, specially that last one. mohabbat phoal jaise hay, hijar kkhizaoun mai,murjha k baith jate hay,sokh k bikhar jate hy, zamean se lipat jate hay,milan k bharoun ka,phr intizar krte hay, mhbt phoal jaise hay.
    i love the way u imagine things its really very fantastic. MA SHA ALLAH.

    Liked by 1 person

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s