Nikah Pen

Advertisements

Mana k Ajnabi Thay

Mana k ajnabi thay
Hum kuch saal pehlay

Is dil ko bha gae tum
Kuch sath chaltay chaltay

Wo qehqahay tmharay
Wo pur ronaq nigahain

Wo cheheay pay khiltay rang
Wo narm hathon ka lams

Wo piyar say humain dekna
Or dil na is say bharna

Kabhi jagtay kabhi khawaab main
Bus hamein say a ker milna

Rafta rafta dheeray dheeray
Mohabbat gehri ho gai

Piyar ki orhni orh kr
Hum hawaon main urna seekh gae

Hawa bhi zalim hoti hai
Yay baat kahein hum bhool gae

Sard hawa ka mosam aya
Sakhti bala ki sath laya

Laakh dhampa dil ko teray
Sard hawa ki sardi say

Janay kesay reh gai
Koi jaah tmharay seenay main

Sard hawa ko bha gai
Aik jaah tmharay seenay main

Cheen liya wo takht o taaj
Hamara tmharay seenay main

Aj jo bethay hain
ro ba ru ik doojay k
Tmhi ko dhoondtay hain
tmhi k sath ho ker

Mana k ajnabi thay
Hum kuch saal pehlay

Is dil ko bha gae tum
Kuch sath chaltay chaltay

(Faqeera)

جیسے

جیسے آغوشِ بہار ہو بھری بھری

گل و رنگ و بو سے سجی سجی

ویسے ہم بھی تھے کھلے کھلے

مسکراہٹوں سے سجے سجے

جیسے پروانے کو جنون ہو

شمع کے گرد طواف کا

ویسےتم بھی تھے میرے رو برو

میرے آس پاس۔ ۔ ۔ میرے چار سو

جیسے وقت بھی تھا بہتی ندی

ٹہری سی۔ ۔ ۔ پر چلتی ہوئ

میرا وقت بھی تھا ٹہرا ہوا

چند لمہوں میں بٹا ہوا

پھر اس نے جو بدلی ادا

بہار کی گود اجاڑ دی

اک دن خزاں نے آ کے چپکے سے

میرے گل و رنگ اجاڑ دیئے

ظالم ہوا بھی اک ساتھ تھی

جو میری شمع کو بجھا گئی

وہ طواف بھی ٹھر گیا

اور پروانہ بھی جل گیا

اب نہ تم ہو میرے رو برو

نہ میرے آس پاس نہ چار سو

بیٹھی ہوں میں اجڑی ہوئی

مرجھائی سی۔ ۔ ۔ ادھ مری ہوئی

تم بہار تھے ۔ ۔ ۔ میری آس تھے

میرے پروانے کا طواف تھے

اب نہ کوئی بہار ہے

اور نہ کوئی جلتی شمع

تم کس اور چلے گئے

ہم کس موڑ پہ بچھڑ گئے

کیا ہم نے تھامے تھے ھاتھ نہیں

یا ہم کبھی ساتھ ۔ ۔ ۔ چلے نہ تھے

(فقیرہ)